دُنیا کے 27 ممالک جہاں آج بھی کوئی ریلوے نیٹ ورک نہیں

ذرائع نقل و حمل انسان کی ازل سے ضرورت رہی ہےاور اس ضرورت کو پُورا کرنے کے لیے انسان کی صدیوں کی محنت آج ہوائی جہاز ،بحری جہاز، ریلوے اور گاڑیوں وغیرہ کی صُورت میں ہمارے سامنے ہے لیکن ان سب کی ابتدا 12 ہزار سال سے بھی پہلے پہیے سے ہُوئی تھی۔

https://upload.wikimedia.org/wikipedia/commons/thumb/3/32/Roue_primitive.png/800px-Roue_primitive.png
John O’Neill, (User:Jjron) / CC0

ابتدا میں پہیہ لکڑی اور پتھر سے بنایا جاتا تھا جسکو دھکا لگانے کے لیے بے پناہ قُوت کی ضرورت ہوتی تھی اور اس ضرورت کو پُورا کرنے کے لیے جانوروں اور غُلاموں کا استعمال کیا جاتا تھا پھر پہیے کی اس رگڑ کی قُوت کو کم کرنے کے لیے انسان نے پٹری دریافت کی جس سےآج کا جدید ریلوے ٹریک وجود میں آیا۔

C:\Users\Zubair\Downloads\railway-line-1007925_1920.jpg

ریلوے کی تاریخ پر نظر ڈالی جائے تو نشان ملتے ہیں کہ تاریخ میں سب سے پہلے پٹری رومنوں نے چھٹی صدی قبل مسیح میں استعمال کرنی شروع کی اور 6 سے 8 کلومیٹر کے ٹریک بحری جہازوں کو شہر سے سمندر تک لیکر جانے کے لیے بنائے۔

پندرویں صدی میں یورپ کے ملک آسٹریا میں پہلی لکڑی کی ریل گاڑی بنائی گئی جسے دھکیلنے کے لیے گھوڑوںاور انسانی قوت کا استعمال کیا جاتا تھا اور پھریہ طریقہ کار سارے یورپ میں ہی مقبول ہوتا چلا گیا اور یورپ کے کئی ممالک میں لکڑی کی اس ٹرین کے ٹریک بچھائے جانے لگے اور ستارویں صدی میں سٹیم پاور انجن کی دریافت کے بعد ریلوے کا یہ نظام ساری دُنیا میں مقبول ہونا شروع ہوگیا۔

https://upload.wikimedia.org/wikipedia/commons/f/f3/TrevithicksEngine.jpg
chris55.Chris55 at en.wikipedia / CC BY-SA

سٹیم پاور انجن کے بعد الیکٹریکل انجن ، ڈیزل انجن اور پیٹرول انجن دریافت ہُوئے اور ساری دُنیا میں ریلوے ٹریک بچھائے گئے اور ریلوے ذرائع نقل و حمل کا سب سے بڑا ذریعہ بن گیا لیکن اب بھی دُنیا کے 27 ممالک ایسے ہیں جہاں ٹرین کا کوئی نیٹ ورک نہیں ہے ان 27 ممالک میں انڈورا، بھوٹان، سیپرس، ایسٹ تیمور،گیانا بساؤ، آئس لینڈ، کویت، کیبیا، مکاؤ، مالٹا، مارشل آئی لینڈ، موریشیس، مائیکرو نیشا، نگر، عمان، پاپوا نیو گیانا، قطر، روانڈہ، سان مرینو، سولومن آئی لینڈ، سومالیہ، سوری نیم، ٹونگو، ٹرینڈاڈ اینڈ ٹوباگو، ٹوالو، وانواتو، یمن وغیرہ شامل میں اور یہاں ٹرین نیٹ ورک نہ ہونے کی بڑی وجوہات ان علاقوں کا ریگستان ہونا اور پہاڑی ہونا ہے۔

نوٹ : برصغیر پاک و ہند میں سب سے پہلی ٹرین چنائی سے مدراس تک ریڈ ہل ریلوے کے نام سے 1837 میں چلائی گئی ، 1861 میں کراچی سےکوٹری تک کا 169 کلومیٹر کا ٹریک کھولا گیا اور یہ ریلوے ٹریک پاکستان کا پہلا ریلوے ٹریک ہے ۔