سٹیفن ہاکنگ کی آخری نصیحت

عظیم برطانوی سائنس دان پروفیسر سٹیفن ہاکنگ نے اپنی آخری نصیحت میں سائنس دانوں کو تلقین کی تھی کہ انہیں کسی بھی تیسری مخلوق سے رابطہ کرنے کی ضرورت نہیں ہے اور پیغامات بھیجنے والے رابطے سے سائنس دانوں کو منع کیا۔
ڈسکوری ٹی وی چینل پر دیکھائی جانے والی ایکڈاکو مینٹری فلم میں 2010 میں سٹیفن ہاکنگ نے کہا تھا کہ انسانوں کے علاوہ کسی اور عاقل مخلوق کی موجودگی تسلیم سے باہر نہیں ہے، مگر ہمیں ایسی کسی بھی مخلوق سے رابطے سے بعض رہنا چاہیے۔

ہاکنگ کا مزید کہنا تھا کہ ایسی مخلوق سے رابطے کی صورت میں بنی نوع انسان کی تباہی بھی ہو سکتی ہے، ایسی مخلوق ہو سکتا ہے انسانوں سے زیادہ سمجھد ار اور سائنس میں آگے ہو اور زمین سے ملنے والے پیغامات انہیں اپنی طرف متوجہ کریں اور وہ زمین پرآکر انسانوں کے وسائل ان سے چھین لیں۔

سائنس دان کو شک تھا کہ ایسی مخلوق سے رابطے پر زمیں والوں کے ساتھ ایسے ہی ہو سکتا ہے جیسے کولمبس کے امریکہ دریافت کرنے کے بعد وہاں کے رہنے والوں کیساتھ ہوا جنہیں بعد میں انہیں کی زمین پر غلام بنا کر ان سے ان کے وسائل چھین لیے گئے۔
سٹیفن نے سائنس دانوں کی طرف سے خلا میں بھیجے گئے پیغامات جن میں انسانوں کی تصاویر اور زمین تک پہنچنے کے نقشے شامل تھے کی شدید مذمت کی۔اس کے علاوہ دوسرے سیاروں پر ریڈیو بیمر پیغامات بھیجنے کی بھی مذمت کی۔

پروفیسر ہاکنک کہتے تھے کہ یہ سوچنا ٹھیک ہے کہ کوئی اور مخلوق بھی ہے مگر وہ کیسی ہے یہ جاننا آسان کام نہیں۔پروفیسر ہاکنگ کا شمار ائن سٹائن کے بعد سمجھدار ترین سائنس دانوں میں ہوتا تھا انہوں نے اپنے کام سے اپنی پہچان پیدا کی ان کی تھوریز آنے والی نسلوں تک انسان کے کام ائیں گی۔